Tag Archives: نے

حریت قائدین کی جان کو شدید خطرات، مسئلہ کشمیر خطے میں ٹائم بم کی صورت اختیار کر گیا، مشال ملک نے بھارت کو وارننگ دیدی

اسلام آباد (این این آئی)حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک نے کہا ہے کہ کشمیر کی صورتحال دن بہ دن بگڑتی جارہی ہے، حریت قائدین کو کچھ ہوا تو خمیازہ بھارت کو بھگتنا پڑے گا۔مصری وفد کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے مشال ملک نے کہا کہ کشمیریوں نے ماہ محرم کو کربلا کی طرح گزارا، یاسین ملک کی
صحت دن بہ دن گرتی جارہی ہے اور اْن کی نظر بندی کو 7 ماہ ہوگئے۔مشال ملک نے کہاکہ حریت قائدین کی جان کو شدید خطرات لاحق ہیں، اگر کشمیری قائدین کو کچھ ہوا تو اس کا خمیازہ بھارت کو

بھگتنا پڑے گا۔ اْن کا کہنا تھا کہ مسئلہ کشمیر خطے میں ٹائم بم کی صورت موجودہے، اس کے حل میں جتنی تاخیر ہوگی خطہ اتنے دن خطرات میں گہرا رہے گا۔



پنجاب کابینہ کی تعداد تاریخ کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گئی ،جہازی سائز کی کابینہ کے باوجود کام کچھ نہیں ہو رہا ‘(ن)لیگ نے آئینہ دکھا دیا

لاہور( این این آئی)پنجاب کابینہ کی تعداد 46تک پہنچنے کے بعد تاریخ کی ریکارڈ سطح پر پہنچ گئی ۔رپورٹ کے مطابق ملک اسد کھوکھر کے بطور وزیر حلف اٹھانے کے بعد وزرا ء کی تعداد 36 ہوگئی ہے ۔ اس کے ساتھ کابینہ میں وزیر اعلیٰ کے پانچ خصوصی مشیر بھی شامل ہیں۔عون چوہدری کو ہٹائے جانے کے بعد آصف محمود کو مشیر تعینات کیا
گیا جبکہ ابھی وزیراعلیٰ کے ترجمان کی تعیناتی باقی ہے ۔ذرائع کے مطابق وزیر اعلی کے ترجمان بھی مشیر کے اختیارات استعمال کرتے ہیں۔مسلم لیگ (ن) پنجاب کی سیکرٹری اطلاعات عظمیٰ بخاری نے کہا کہ ہمارے

دور میں اڑتیس رکنی کابینہ پر اعتراض کیا جاتا تھا اور اب پنجاب میں جہازی سائز کی کابینہ ہے مگر کام کچھ نہیں ہو رہا ۔



 ملک کے بعض مقامات پر آئندہ 24 گھنٹوں کے دوران بارش کا امکان،محکمہ موسمیات نے زبردست خبر سنادی

اسلام آباد (این این آئی) اسلام آباد سمیت ملک کے بعض مقامات پر آئندہ 24 گھنٹوں کے دوران بارش کا امکان ہے۔محکمہ موسمیات کے مطابق ہفتہ کے روز ملک کے بیشتر علاقوں میں موسم گرم اور مرطوب رہیگا تاہم مالاکنڈ، ہزارہ، مردان،
پشاور، کوہاٹ، راولپنڈی، گوجرانوالہ، لاہور، سرگودھا  ڈویژن، اسلام آباد، کشمیر اور گلگت بلتستان میں چند مقامات پر تیز ہواؤں اور گرج چمک کیساتھ بارش کا امکان ہے۔گزشتہ روز ملک کے بیشترعلاقوں میں موسم گرم اور مرطوب



مجھ سے معیشت پر سوال کب کیا جائے؟ 5 سال بعد معیشت کہاں ہو گی؟ وزیراعظم نے قوم کوبتا دیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) حکومت کے پانچ سال مکمل ہو جائیں تب ملک کی معیشت پر سوال کیا جائے، یہ بات وزیراعظم پاکستان عمران خان نے الجزیرہ ٹی وی کو دیے گئے انٹرویو میں کہی، انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت میں ماضی کی طرح کوئی بزنس ایمپائر نہیں بنا رہا،وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ یہ نیا پاکستان ہے کیونکہ میگا کرمنل کیسزمیں جس طرح لوگ جیلوں میں ہیں پہلے کبھی نہیں تھے۔
انہوں نے انٹرویو کے دوران کہا کہ 13 مہینوں میں وزیراعظم یا کسی وزیر کے خلاف کرپشن کیس نہیں آیا یہی نیا پاکستان ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ

جب وزارت عظمی ٰ کا منصب سنبھالا تو پاکستان پر 90.5 ارب ڈالر کا کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ تھا، ملک کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں ہم نے 70فیصد کمی کردی ہے، انہوں نے کہا کہ ہم نے برآمدات بڑھائی ہیں اور درآمدات کم کی ہیں، وزیراعظم نے کہا کہ ملک کی چالیس فیصد بجلی درآمدی ایندھن سے حاصل ہوتی ہے، انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان سٹیل مل آئندہ چار ماہ میں کام کرنا شروع کر دے گی، وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میری حکومت کے پانچ سال مکمل ہو جائیں تو تب ملک کی معیشت پر سوال کیا جائے، انہوں نے کہا کہ کسی حکومت کی کارکردگی جانچنے کا وقت پانچ سال بعد کا ہوتا ہے، انہوں نے کہا کہ پہلی دفعہ پاکستان میں معیشت کو درست کیا جا رہا ہے، وعدہ کرتا ہوں کہ پانچ سال بعد حکومت چھوڑیں گے تو سرپلس اکنامی ہو گی، وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان کا آئی ایم ایف سے یہ آخری پیکج ہو گا، ہمیں آئی ایم ایف کی جانب سے اخراجات میں کمی اور ریونیو بڑھانے کے علاوہ کچھ نہیں کہا گیا۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت میں روایتی جنگ ہوئی تواختتام ایٹمی جنگ پر ہوگا اورایٹمی جنگ کے نتائج صرف دو ملکوں کے درمیان نہیں بلکہ پوری دنیا میں پھیلیں گے جو بہت بھیانک ہونگے۔وزیراعظم عمران خان نے الجزیرہ ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ ایٹمی جنگ سے بچنے کیلئے عالمی برادری کو کردار ادا کرنا ہوگا
کیونکہ ہم نے اقوام متحدہ میں مسئلہ کشمیر کامعاملہ اٹھایاہے تاکہ جنگ سے بچا سکے لیکن ہندوستان نے پاکستان یا آزاد کشمیر میں کوئی جارحیت کی تو اسکا منہ توڑ جواب دیں گیاورہندوستان کو پتہ ہونا چاہئے کہ پاکستانی قوم ایک ایسی قوم ہے جو خون کے آخری قطرے تک لڑے گی انہوں نے کہا کہ جب بھی دو ایٹمی طاقتیں لڑیں گی تو اختتام اسکا بھیانک ہوگا اور ہمیں سنگین نتائج کا سامنا کرنے پڑے گا اور اس ایٹمی جنگ کے نتائج پوری دنیامیں پھیلیں گے،
انہوں نے کہا کہ مودی نے خطے کے امن کو داؤ پر لگا دیا ہے اور وہ ایک ہٹلر کا کردار ادا کررہے ہیں،ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ بھارت میں الیکشن کے دوران ہی ہمیں اندازا ہوگیا تھا کہ مودی ایک بار پھر برسراقتدار آئیں گے اور ہمیں یہ تشویش تھی کہ بی جے پی کی کامیابی سے ایک بار پھر پاک بھارت تعلقات کشید ہ ہوں گے اور عین مطابق وہی حالات چل رہے ہیں،پاکستان کی ہمیشہ کوشش رہی ہے کہ بھارت کو مذاکرات کی میز پر لائیں اور ہم اس کوشش میں کامیاب بھی رہیں ہیں،مذاکرات میں دونوں ملکوں کے مابین تمام معاملات پر اتفاق ہو جاتا ہے جب کشمیر کی بات آتی ہے تو بھارت بھاگ جاتا ہے،
ہم نے مسئلہ کشمیر کے ایشو کو ہر فورم پر کامیابی سے اٹھایا ہے اور بین الاقوامی ممالک نے مسئلہ کشمیر پر ہمیشہ پاکستان کا ساتھ دیا ہے،اقوام متحدہ سمیت تمام بین الاقوامی اداروں نے مسئلہ کشمیر کے حل لئے بھارت پر دباؤ ڈالا ہے، مسئلے کے حل کیلئے سلامتی کونسل کی قرار داد موجود ہے،دنیا کے تمام اقوام کو چاہیے کہ وہ اس قرار داد پر عملدرآمد کرائیں،عمران خان نے کہا کہ واشنگٹن میں بین الاقوامی ممالک کے سربراہوں کے ساتھ مسئلہ کشمیر بھر پور طریقے سے اٹھاؤں گا،میری تجویز ہے کہ امریکہ،روس اور چین مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اپنا کردار ادا کر سکتے ہیں،اس حوالے سے ان ممالک کے سربراہوں سے بات کر چکا ہوں اور خوشی ہے کہ امریکہ،چین اور روس نے مسئلہ کے حل کیلئے ہماری تجویز پر کی مکمل حمایت کی ہے جس کا میں ان کا مشکور ہوں۔

موضوعات:

loading…



ججز کے فیصلوں پر وہ لوگ تبصرہ کرتے ہیں جنہیں قانون کا پتہ ہی نہیں،بہتری لانے کیلئے کیا کرنا ہوگا؟چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے انتباہ کردیا

لاہور(این این آئی)چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا ہے کہ رویوں کو تبدیل کئے بغیر بہتری نہیں لائی جاسکتی،بہتری لانے کیلئے ادارے، رویے اورسوچ کو ایک پیج پرلانا ہوگا، جس دور سے ہم گزر رہے ہیں اس میں تاریخ بن نہیں رہی بلکہ حقائق اجاگرہورہے ہیں،ہمارے پاس بہترین ججزکام کررہے ہیں مگرتاریخ دان بتائیں گے ہمارے ججز فیصلے کرتے ہوئے معیار پریاتعداد پر یقین رکھتے تھے،
جب میں نے اپنی وکالت شروع کی تب ایس ایم ظفر ایک چمکتے ستارے کی طرح تھے،میں اپنے شاگردوں کو کہتا تھا اگر تمہیں مجھ جیسا بننا ہے تو ایس ایم

ظفر جیسے بنو۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مقامی ہوٹل میں معروف قانون دان ایس ایم ظفرکی کتاب ”ہسٹری  آف پاکستان ری انٹرپریٹڈ“کی تقریب رونمائی میں شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔تقریب میں قائمقام چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس مامون رشید شیخ،لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہد وحید خان، سابق صدر سپریم کورٹ بار علی ظفر، جماعت اسلامی کے مرکزی رہنما لیاقت بلوچ، سابق چیئرمین سینیٹ وسیم سجاد،سابقہ سیکرٹری خارجہ شمشاداحمد خانسمیت دیگر نے بھی خطاب کیا۔چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ تاریخ کی خوبصورتی یہ ہے کہ اسے اپنے انداز میں بیان کیا جا سکتا ہے،جس دور سے ہم گزر رہے ہیں اس میں تاریخ بن نہیں رہی بلکہ حقائق اجاگرہورہے ہیں،تاریخ دان ہی ہمارے موجودہ دور کے بارے میں بتائیں گے،میرا عہدہ موجودہ صورتحال پر بات کرنے کی اجازت نہیں دیتا۔ہمارے معاشرے میں بہترین وکلاء موجود ہیں،مگرتاریخ دان بتائیں گے کہ آج کے وکلاء بہترین دلائل دیتے تھے،ان کاانداز بیاں اچھا تھایا وہ ہاتھ سے دلائل دینا جانتے تھے۔اپنے رویوں کو تبدیل کئے بغیر بہتری نہیں لائی جاسکتی،بہتری لانے کیلئے ادارے، رویے اورسوچ کو ایک پیج پرلانا ہوگا،اسی فارمولے کے تحت پاکستانی عدلیہ نے مقدمات نمٹانے کا ریکارڈ قائم کیا۔
خصوصی فوجداری ٹرائل عدالتوں نے 137دنوں میں 36000 ٹرائل نمٹادئیے گئے،نئے قوانین، اضافی اخراجات، موجودہ انفراسٹرکچر کے ساتھ ہی اہداف مکمل کرنا خوش آئند ہے۔چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ اس کتاب میں پاکستان کی تاریخ کا جامع احاطہ کیا گیا ہے۔ کتاب پڑھتے ہوئے میرا خیال تھا کہ مصنف نے حالیہ حالات کو کیے قلمبند کیا ہو گا۔ہمارے ملک میں ایسے تعلیمی ادارے بھی ہیں جہاں سیکنڈ ایئر کا طالب علم فرسٹ ایئر کے طالب علم کو پڑھا رہا ہے، جب میں نے اپنی وکالت شروع کی اس وقت ایس ایم ظفر ایک چمکتے ستارے کی طرح تھے۔ میں اپنے شاگردوں کو کہتا تھا اگر تمہیں مجھ جیسا بننا ہے تو ایس ایم ظفر جیسے بنو۔ 99 فیصد لوگوں نے ہمارے فیصلے پڑھے ہی نہیں ہوتے کیونکہ انہیں قانون کا پتہ ہی نہیں ہوتا۔
ججز کے فیصلوں پر وہ لوگ تبصرہ کرتے ہیں جنہیں قانون کا پتہ ہی نہیں ہوتا۔انہوں نے کہا کہ ہم کبھی امید نہیں چھوڑ سکتے، یہی ہمارا ملک ہے، ہمارا مسکن ہے اور ہم نے یہیں رہنا ہے اس لیے ہم نے حقیقت پسند بننا ہے اور آنکھیں بند نہیں کرنی۔چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ اس سسٹم میں رہتے ہوئے ہم نے کامیابیاں حاصل کی ہیں، جج محنت کر کے ایمانداری سے فیصلے دیتے ہیں، مثبت سوچ کے ساتھ ہمیں آگے بڑھنا ہو گا۔انہوں نے شرکاء کو بتایا کہ ایس ایم ظفر اور میرے سسر آپس میں دوست تھے،میرے سسر ہمیشہ مجھ سے ایس ایم ظفر کے بارے میں پوچھتے تھے۔ایس ایم ظفر صاحب نے مجھ سے اس کتاب کے بارے میں میرے نظریات پوچھے،مجھے اس کتاب کے بارے بہت کچھ لکھنا تھا لیکن کام کی زیادتی کی وجہ سے نہیں لکھ سکا۔ہم پاکستان کی مختلف تواریخ پڑھتے ہیں کیونکہ ہمارے پاس مختلف کتابیں ہیں،اس کتاب کے پہلے حصے میں تمام حقائق بیان ہیں۔تقریب سے دیگر نے بھی خطاب کیا۔

موضوعات:

loading…



کشمیر کے معاملے پر پاکستان نے بہت دیر کر دی، اب کیا ہوگا؟سابق وزیر خارجہ حسین ہارون کے انتہائی تشویشناک انکشافات

کراچی(این این آئی)پاکستان کے سابق وزیر خارجہ حسین ہارون نے کہا ہے کہ پاکستان نے کشمیر کے معاملے پر بہت دیر کر دی ہے پاکستان کو فوری ردعمل دینا چاہیے تھا۔ایک انٹرویو میں سابق وزیر خارجہ حسین ہارون نے کہا کہ میں تو بہت پہلے سے کہہ رہا تھا پاکستان کو تیار رہنا چاہیے کیونکہ ہندوستان کے ارادے درست نہیں تھے۔
انہوں اے کہاکہ بھارتی انتخابات کے موقع پر عمران خان کے مودی کی حمایت میں بیان ان کی غلط فہمی تھی۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نے کشمیر کا سفیر بننے ک اعلان کر رکھا ہے تاہم ہمیں اپنی

حکمت عمل پر بھی غور کرنا چاہیے کہ وہ کارآمد بھی ہے یا نہیں۔حسین ہارون نے کہا کہ بھارتی عزائم کافی عرصے سے نظر آ رہے تھے اور ان کے بیانات سے لگ رہا تھا کہ وہ تیاری کر رہے ہیں تاہم اس حوالے سے پاکستان کی کوئی تیار نظر نہیں آ رہی تھی اور پاکستان اب بھی تیار نظر نہیں آ رہا، حکومت پہلے یہ تو طے کر لے کہ اس نے کرنا کیا ہے؟سابق وزیر نے کہا کہ پاکستان کو طالبان امریکہ مذاکرات میں کردار ادا کرنے سے قبل یہ شرط رکھنی چاہیے تھی کہ وہ پہلے آپ پر سے ایف اے ٹی ایف کی سختیوں کو ختم کرے۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان کا گلا پھندے میں آیا ہوا ہے اور پاکستان کو چاہیے کہ وہ معاملے پر سخت اقدامات کرے تاکہ بھارت کے پاس کوئی جواز نہ رہے۔حسین ہارون نے کہا کہ دنیا عمران خان کو پہلے سے جانتی ہے اور وہ یورپ اور امریکی میں جانا پہچانا برانڈ ہے تاہم کیا انہوں نے اپنی شہرت کا فائدہ اٹھایا؟ عمران خان اگر سفیر بن کر نکل پڑیں گے تو پاکستان کو کون چلائے گا؟انہوں نے کہا کہ پاکستان کو بھارتی جارحیت کا فوری جواب دینا چاہیے تھا لیکن پاکستان نے بہت دیر کر دی اور جوں جوں معاملے میں تاخیر ہوتی رہے گی معاملہ آپ کے ہاتھ سے نکل جائے گا۔



دورہ پاکستان میں سکیورٹی کا خطرہ نہیں بلکہ ہماری توجہ کس چیز پر ہے ؟سری لنکن کپتان نے واضح کر دیا

لاہور(آن لائن) سری لنکن ون ڈے کپتان لہیرو تھریمانے نے کہا ہے کہ پاکستان میں ٹو ر کے دوران میری توجہ کا مرکز سکیورٹی نہیں بلکہ صرف کرکٹ ہے ۔ہفتہ کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک بیان میں سری لنکن ون ڈے کرکٹ ٹیم کے کپتان لہیروتھریمانے نے کہا کہ کرکٹ سری لنکا نے پاکستان میں
حفاظتی انتظامات سے آگاہ کردیاہے‘جس پر مکمل اطمینان ہے‘میری ساری توجہ کھیل پر مرکوز ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہمارے پاکستان جانے پر فیملی کو کوئی اعتراض نہیں کیونکہ ہم سب اپنے ملک کی نمائندگی کر رہے ہیں ‘10کھلاڑیوں کا دورے سے

انکار ان کا ذاتی معاملہ ہے ‘جس کا احترام کرنا چاہئے۔



سنگدل شوہر نے چوتھی شادی کے چکر میں   تیسری بیوی کو آگ لگاکر مار ڈالا،لرز ہ خیز واقعہ

کالاشاہ کاکو(آن لائن) سنگدل شوہر نے چوتھی شادی کے چکر میں اپنی تیسری بیوی کو آگ لگاکر مار ڈالا، واقعہ کو سلنڈر پھٹنے کا رنگ دینے کی کوشش ناکام ہونے پر ملزم فرار، ملزم کا والد گرفتار،بتایاگیا ہے کہ تھانہ صدر مریدکے کے علاقہ ننگل ساہداں کے رہائشی زاہد ولد بوٹا نامی شخص نے چوتھی شادی کے چکر میں اپنی تیسری بیوی 6بچوں کی ماں صائمہ بی بی کو بدترین تشدد
کا نشانہ بنانے کے بعد آگ لگاکر مار ڈالا اور بعد ازاں واقعہ کوگیس سلنڈرپھٹنے کارنگ دینے کیلئے شورمچاکر محلہ داروں کواکٹھاکرلیامگرکامیاب نہ ہوسکااور موقع سے فرارہوگیا بعدازاں متعلقہ پولیس

بھی اطلاع ملنے پرموقع پرپہنچ گئی اور مقتولہ کی نعش پوسٹمارٹم کیلئے تحصیل ہیڈکوارٹرہسپتال مریدکے پہنچادیا۔ پولیس نے مفرورملزم کے والد محمدبوٹاکوگرفتارکرلیا۔



اسلام آباد کی جگہ کراچی کو دوبارہ وفاقی دارالحکومت بنانے کی تجویز،پیپلزپارٹی نے بڑا سرپرائز دے دیا

کراچی (این این آئی) اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی نے کہا ہے کہ کراچی قیام پاکستان کے وقت بھی دارالحکومت تھا اسے واپس دارالحکومت میں تبدیل ہونا چاہیے۔ ہفتہ کو کراچی کی احتساب عدالت کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے آغا سراج درانی نے کہا کہ کراچی کے کچرے پر صرف اور صرف
سیاست ہوئی ہے، کراچی قیام پاکستان کے وقت بھی دارالحکومت تھا اسے واپس دارالحکومت میں تبدیل ہونا چاہیے۔ اسپیکر سندھ اسمبلی نے کہا کہ آئین کے آرٹیکل 149 کے مطابق وفاق صوبے کو صرف اور صرف مشورہ دے سکتا ہے، یہ غلط اخذ کیا گیا ہے

کہ وفاق صوبے کو کنٹرول کرے گا۔



تحریک انصاف کے اس سابق رکن اسمبلی کو بھارت میں پناہ نہ دی جائے، سردار سورن سنگھ کے بیٹے نے مودی سے اپیل کردی

پشاور (این این آئی)پی ٹی آئی کے سابق رکن صوبائی اسمبلی سردار سورن سنگھ کے بیٹے اجے سنگھ نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی سے اپیل کی ہے کہ وہ بلدیو کمار کو بھارت میں پناہ نہ دیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق سابق صوبائی وزیر اقلیتی امور سورن سنگھ کے19 سالہ اجے سنگھ نے کہا کہ والد کے قتل کیس میں انسداد دہشت گردی کی عدالت نے
بلدیو کو 2018 میں بری کردیا تھا تاہم اب بھی پشاور ہائی کورٹ میں اْن کے خلاف پشاور ہائی کورٹ میں اپیل دائر ہے۔اجے نے اس بات پر زور دیا کہ بھارت بلدیو کو

واپس پاکستان بھیجے۔اجے سنگھ نے کہا کہ مودی ہمیشہ دہشت گردی کے خلاف بات کرتے ہیں۔انہوں نے انصاف کی امید ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مودی پاکستانی انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت ملزم کو بھارت میں پناہ نہیں دیں گے۔انہوں نے پیشی کی تفصیلات میں بتایا کہ بلدیو پر بونیر کے پیر بابا پولیس اسٹیشن میں انسداد دہشت گردی ایکٹ کے سیکشن 7 کے مطابق اور پاکستان پینل کوڈ کے سیکشن 302 کے تحت مقدمات درج ہیں۔اجے کے مطابق انہوں نے بلدیو سمیت 6ملزمان کے خلاف پشاور ہائی کورٹ میں اپیل دائر کر رکھی ہے جس میں 30 ستمبر کو ملزمان کو طلب کیا گیا ہے۔انہوں نے امید ظاہر کی بھارت ذمہ دار ملک کا برتائو کریگا اور دہشت گردی میں ملوث شخص بلدیو کو سیاسی پناہ نہیں دے گا۔دوسری جانب بلدیو کمار کا کہنا ہے کہ انہیں ہائی کورٹ کی جانب سے کوئی سمن موصول نہیں ہوا۔ انہوں نے کہا کہ اگر وہ ملزم ہوتے تو امیگریشن حکام انہیں ویزہ جاری نہیں کرتے۔بلدیو کے مطابق اْن کے ساتھی سورن کا قتل اقلیتوں کو پاکستان میں برداشت نہ کرنے والے دہشت گردوں نے کیا تھا۔
تحریک طالبان نے سورن سنگھ کے قتل کی ذمہ داری بھی قبول کی تھی اس کے باوجود مجھے 2 سال جیل میں رکھا گیا۔انہوں نے کہا کہ وہ واپس پاکستان نہیں جائیں گے کیونکہ اْن کی 11 سالہ بیٹی ریا تھیلیسمیا کے مرض میں مبتلا ہے جو بھارتی میں زیر علاج ہے۔واضح رہے کہ پی ٹی آئی کے سابق رکن اسمبلی بلدیو کمار نے بھارت میں سیاسی پناہ کی درخواست دی تھی۔